May 22, 2024

Warning: sprintf(): Too few arguments in /www/wwwroot/esperanzaazteca.com/wp-content/themes/chromenews/lib/breadcrumb-trail/inc/breadcrumbs.php on line 253
جہاں آمدنی ہے وہاں ٹیکس لگانا چاہئے،مفتاح اسماعیل

 سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کہنا ہے کہ جہاں آمدنی ہے وہاں ٹیکس لگانا چاہئے،وزیر خزانہ محمد اورنگزیب کو کسی سے ملے بغیر ٹیکس لگادینا چاہئے،میں نہیں سمجھتا پبلک پرائیویٹ پارٹنر شپ نجکاری سے بہتر ہے، ڈالر کے حوالے سے سٹیٹ بینک کی موجودہ حکمت عملی درست ہے،یہ کیسی حب الوطنی ہے کہ میں ٹیکس نہیں دوں گا آپ کو مٹھائی دے دوں گا۔ جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے سابق وزیر خزانہ نے کہا کہ ٹیکس نہ دینے پر اگر کوئی جیل جاتا ہے تو جائے اس معاملے پر ریاست کو اپنی رٹ قائم کرنی چاہئے۔اگر آپ دکانوں پر بھی ٹیکس نہیں لگاسکتے تو سب بے کار ہے۔ کچھ لوگوں کو جیل بھی بھیجناپڑے تو بھیجیں مگر اب اس سے پیچھے نہیں ہٹنا چاہیے۔ ابتدا میں ساڑھے چار ہزار روپے فی دکان سے لینا شروع کرنا چاہئے۔اس کے بعد بڑے تاجروں کو الگ الگ ٹیکس رجیم میں لائیں، ٹیکس ادا نہ کرنے والے دکانداروں کو بجلی اور رجسٹریشن نہیں دی جائے۔دکانداروں کی ہڑتال دو دن بھی نہیں چلے گی۔دکاندار ایک دن بھی دکان بند کرنا افورڈ نہیں کرسکتا ۔نان فائلز کی سمیں بند کرنے کا فیصلہ بظاہر ٹھیک ہے۔ پہلے آپ ان کے فون بند کریں پھر انہیں پاسپورٹ دینا بھی بند کردیں۔گفتگو کے دوران سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا مزید کہنا تھا کہ سٹیٹ بینک چاہتا تو شرح سود ایک فی صد کم کرسکتا تھا۔ 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *